پیارا فلسطین | پہلی قسط

عزیز الدین مصنف

بیت المقدس کے نام سے تو آپ لازمی واقف ہوں گے۔ القدس اور مسجد اقصیٰ کے نام بھی سنے ہوں گے۔ رسول اللہ ﷺ کے معراج کے سفر مبارک کے بارے میں بھی آگاہ ہوں گے۔ آپ نے غزہ کا نام بھی بہت سن رکھا ہو گا۔ فلسطین کی مظلومیت کی پکار اور مظلوم فلسطینی مسلمانوں کی دل دہلا دینے والی چیخوں کو بھی محسوس کیا ہو گا۔ لیکن کیا آپ نے کبھی سوچا کہ فلسطین دنیا کے جغرافیہ میں کس مقام پر واقع ملک ہے؟ جب آپ فلسطین میں آمد و رفت کے راستوں پر توجہ دیں گے تو آپ کو وہاں کے مقامی مجاہدین کے حوالے سے آنے والی خبروں کا بھی درست اندازہ ہو گا۔

کیا آپ کو نقشے پر فلسطین نامی کوئی ملک کبھی ملا ہے؟

اگر ابھی تک آپ نے نقشہ نہیں دیکھا تو ابھی دیکھ لیں۔ مشرق وسطیٰ کے ممالک (عراق، شام، لبنان، اردن، مصر اور سعودی عرب) کے درمیان بحیرۂ روم کے مشرقی کنارے پر فلسطین نامی ملک تلاش کریں، آپ کو فلسطین نامی کوئی بھی علاقہ نظر نہیں آئے گا، بلکہ اس جغرافیہ پر آپ کو اسرائیل نامی ملک نظر آئے گا۔

جی ہاں!

آپ کو معاصر جغرافیہ میں کہیں فلسطین نامی ملک نہیں ملے گا، یہ مبارک ملک نقشے سے کیوں مٹ گیا، اس سوال کے جواب کے لیے یہ مختصر دستاویزی سلسلہ پڑھیں۔

موجودہ فلسطین کا مختصر جائزہ

چھ ہزار سال قبل موجودہ فلسطین کی سرزمین پر یبوسی (Jebusites) آباد تھے۔ یبوسیوں نے اپنے دورِ سلطنت میں بیت المقدس کو اپنے مرکز کے طور پر چنا، یبوسیوں کے بعد اس سرزمین پر بحیرۂ روم کے راستے کنعانی (Canaanites) آگئے اور یہاں آباد ہوئے، بعد میں ان لوگوں کی شہرت سے اس سرزمین کو بھی کنعان کہا جانے لگا۔ کنعان شمالی فلسطین میں آباد تھے۔ چونکہ یہ علاقہ معاشی طور پر خود کفیل تھا اس لیے فلسطیہ نامی ایک نسلی گروہ یہاں منتقل ہو گیا۔ فلسطیائی باشندے اس علاقے کے دیگر باشندوں کے ساتھ گھل مل کر مدغم ہو گئے، اور انہی فلسطیائی باشندوں کی وجہ سے اس خطے کا نام فلسطین پڑ گیا۔ پوری تاریخ میں فلسطین نے بہت سی حکومتیں دیکھیں، بالآخر اس مبارک سرزمین پر مسلمانوں کی حکومت آ گئی جو گیارہ سو سال سے زیادہ عرصہ قائم رہی۔ مسلمانوں کی حکومت کے دوران فلسطین کی سرزمین پر عیسائی، یہودی اور دیگر مذاہب اور اقلیتوں کے افراد اکٹھے رہتے تھے۔ اس طویل عرصے میں مسلمانوں کی طرف سے ان کے خلاف ظلم کبھی دیکھنے میں نہیں آیا، بلکہ ان تمام سرکاری سہولیات اور آسانیوں سے وہ بھی مستفید ہو رہے تھے جو وہاں مسلمانوں کو حاصل تھیں۔

فلسطین کے جغرافیائی محل وقع کا مختصر جائزہ

نقشے کو اگر دیکھیں تو فلسطین مشرق وسطیٰ میں واقع ایک ایسا ملک ہے جس کے شمال میں لبنان، جنوب میں مصر، مشرق میں اردن اور شام جبکہ مغرب میں بحیرہ روم واقع ہیں۔

ذیل میں دیے گئے نقشے اسرائیل نامی ملک اصل میں فلسطین ہے لیکن اب مکمل طور پر یہودیوں کے قبضے میں ہے اور اس پر فلسطین کی جگہ اسرائیل کا نام چسپاں کر دیا گیا ہے۔

فلسطین کا محل وقوع

جاری ہے…!