داعش کے دو سرکردہ رہنما ہلاک اور ایک اہم گروپ گرفتار

#image_title

داعش کے دو سرکردہ رہنما ہلاک اور ایک اہم گروپ گرفتار

المرصاد کو اپنے معتبر ذرائع سے اطلاع ملی ہے کہ 26 ذی الحجہ (24 سرطان/15 جولائی) کو صوبہ کابل کے ضلع بگرامیو کے میرویس قصبے میں خوارج کے ایک خفیہ ٹھکانے پر آپریشن کے نتیجے میں داعش کے دو اہم رہنما مارے گئے۔

ان ہلاک ہونے والے اہلکاروں میں سے ایک نجیب نامی شخص تھے جو کہ اصل میں صوبہ قندوز سے تھا اور اسے داعش کی خراسان شاخ کیلئے صوبہ نمروز کا عہدیدار مقرر کیا تھا۔ ہلاک ہونے والے ایک اور اہم شخص کا نام انس تھا جو ازبکستان کا شہری تھا اور داعش کی کارروائیوں کا کمانڈر تھا۔

ذرائع کے مطابق، نجیب اور انس نے کابل شہر میں حملوں کی منصوبہ بندی اور ان پر عمل درآمد کا منصوبہ بنایا، لیکن وہ اپنے ہدف تک پہنچنے سے پہلے ہی امارت اسلامیہ کے خصوصی دستوں کی کارروائیوں میں تباہ ہو گئے۔

ایک اور خبر کے مطابق صوبہ بلخ کے مرکز مزار شریف شہر میں داعش کے ایک اہم گروپ کو گرفتار کر لیا ہے۔ گرفتار ہونے والوں میں ایک تاجک شہری بھی شامل ہے۔ یہ گروہ بلخ اور قندوز صوبوں میں سویلین اور فوجی اہداف کے خلاف تخریبی سرگرمیاں انجام دینے کی منصوبہ بندی کر رہا تھا۔